گروگرام :کھلے میں نماز جمعہ کا تنازع پہنچا سپریم کورٹ

0

نئی دہلی (ایجنسیاں) : ہریانہ کے گروگرام میں جمعہ کی نماز پڑھنے کو لے کر جاری تنازع اب سپریم کورٹ میں پہنچ گیا ہے۔ راجیہ سبھا کے سابق ممبر پارلیمنٹ محمد ادیب نے ہریانہ حکومت کے اعلیٰ افسران کے خلاف سپریم کورٹ میں ہتک عزت کی عرضی دائر کی ہے۔محمد ادیب نے اپنی درخواست میں الزام لگایا ہے کہ ہریانہ پولیس اور سول انتظامیہ ان لوگوں کے خلاف کارروائی کرنے میں ناکام رہی ہے جنہوں نے مسلمانوں کو گروگرام میں عوامی جگہ پر نماز پڑھنے سے روکا۔انڈیا ٹوڈے کی رپورٹ کے مطابق محمدادیب نے اس معاملے میں ہریانہ کے ڈائریکٹر جنرل آف پولیس (ڈی جی پی) پی کے اگروال اور چیف سکریٹری سنجیو کوشل کے خلاف ہتک عزت کی کارروائی کا مطالبہ کیا۔ بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) کے سابق رکن پارلیمان ادیب نے الزام لگایا کہ پولیس اور انتظامیہ نے نماز کے تنازع پر نفرت انگیز تقریر کے خلاف کارروائی نہیں کی۔ اس کے علاوہ انہوں نے یہ بھی الزام لگایا ہے کہ انتظامیہ ان لوگوں کی نشاندہی کرنے میں بھی ناکام رہی ہے جو گروگرام میں نماز کو بار بار روک کر فرقہ وارانہ کشیدگی پیدا کرنے کی کوشش کر رہے تھے۔
حال ہی میں گروگرام میں نماز پڑھنے کو لے کر ایک تنازع ہوا ہے۔ ہندو گروپوں اور مقامی باشندوں نے رہائشی کمپلیکس کے قریب کھلے میدان میں نماز ادا کرنے پر اعتراض کیا تھا۔ اس کے ساتھ ہی کھلے میدان میں نماز پڑھنے والوں نے دعویٰ کیا کہ ہر ہفتہ جمعہ کی نماز پڑھنے کے لیے ایک مخصوص جگہ ہے۔ اس کے ساتھ ہی مقامی ہندو گروپس اور رہائشی اس کی مخالفت کر رہے ہیں۔ ساتھ ہی ادیب نے اپنی درخواست میں کہا کہ نماز جمعہ کو کھلے میں پڑھنے کی اجازت جگہ اور سہولیات کی کمی کی وجہ سے دی گئی۔درخواست میں کہا گیا ہے کہ جب 3دسمبر کو ہندو گروپوں نے نماز جمعہ کے خلاف احتجاج کیا تو شرپسندوں کے خلاف کوئی سخت کارروائی نہیں کی گئی۔ اس کے بعد واقعات میں اضافہ ہوا اور گروپوں کی جانب سے نعرے بازی کی گئی۔ درخواست میں کہا گیا ہے کہ مقامی انتظامیہ ایسے واقعات کی روک تھام میں ناکام رہی ہے۔

آپ کے تاثرات
+1
0
+1
0
+1
0
+1
2
+1
0
+1
0
+1
1

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here