Image:hindustantimes.com

دھونی کی قیادت میں 28سالہ خشک سالی کا ہوا تھا خاتمہ، گمبھیر نے رکھی تھی جیت کی بنیاد
نئی دہلی(ایجنسیاں) 2 اپریل 2011 کی تاریخ ہندوستانی کرکٹ کی تاریخ میں ایک خاص مقام رکھتی ہے۔ دراصل یہ وہ دن ہے جب ہندوستانی کرکٹ ٹیم نے 28 سالہ خشک سالی کا خاتمہ کرتے ہوئے دوسری بار آئی سی سی ورلڈ کپ کا ٹائٹل جیتا۔ ٹیم انڈیا ، جس کے کپتان مہندر سنگھ دھونی ہیں ، نے سری لنکا کو فائنل میں 6 وکٹوں سے شکست دے کر پہلی بار ورلڈ کپ اپنی سرزمین پر جیتا۔ اس سے قبل ٹیم انڈیا سال 1983 میں کپل دیو کی کپتانی میں ورلڈ کپ جیتنے میں کامیاب رہی تھی لیکن ہندوستان کو دوسرا ٹائٹل جیتنے میں 28 سال کا طویل عرصہ لگا تھا۔اس ورلڈ کپ کی جیت کے ہیرو تو دھونی تھے لیکن اصل بنیاد گوتم گمبھیر نے رکھی تھی جن کی یادگار اننگ نے ہندوستان کو جیت کی منزل تک پہنچایا تھا۔ ویسے ہندوستان اس کے بعد پانچ ورلڈکپ کھیل چکا ہے لیکن اب تک تیسرا ورلڈکپ حاصل کرنے میں ناکام رہا ہے۔ ون ڈے اور ٹی ٹوئنٹی ملا کر پانچ ورلڈکپ کھیلنے والے ہندوستانی ٹیم کی قیادت چار بار دھونی نے کی مگر ماہی اپنی کپتانی میں دوسرا ورلڈکپ جیتنے میں ناکام رہے۔
2011 کا ورلڈ کپ کئی وجہوں سے ہندوستانی شائقین کے لئے خاص تھا۔ پہلا یہ کہ ہندوستانی ٹیم نے پہلی بار ہوم سرزمین پر ورلڈ کپ کا ٹائٹل جیتا۔ دوسری خاص بات یہ ہے کہ ہندوستان کے عظیم کرکٹر سچن تندولکر کا ورلڈ کپ جیتنے کا خواب بالآخر پورا ہوگیا۔
ورلڈ کپ 2011 کا آغاز 19 فروری کو میزبان ہندوستان اور بنگلہ دیش کے مابین ایک میچ سے ہوا تھا۔ اس میچ میں ہندوستانی ٹیم کی جیت کا آغاز سری لنکا کے خلاف فائنل میچ میں ٹائٹل جیت پر رک گیا تھا۔ورلڈ کپ کا فائنل ممبئی کے وانکھیڑے اسٹیڈیم میں کھیلا گیا تھا۔ اس میچ میں سری لنکن ٹیم ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کرنے آئی تھی۔ اس دوران ، سری لنکن ٹیم کو ابتدائی دھچکا ہندوستانی باؤلرز نے دیا لیکن تجربہ کار بلے باز مہیلا جے وردھنے ایک سرے پر کھڑے رہے۔جے وردھنے نے گرتی ہوئی وکٹوں کے درمیان 88 گیندوں میں 103 رنز کی سنچری کھیلی۔ جے وردھنینے اس اننگز میں 13 چوکے لگائے۔ جے وردھنے کی اس سنچری اننگز کی وجہ سے سری لنکا کی ٹیم ہندوستان کے سامنے 50 اوور میں 274 رنز بنانے میں کامیاب رہی۔
سری لنکا کے 275 کے ہدف کے جواب میں ہندوستانی ٹیم کو سچن (18) اور ویریندر سہواگ (0) کی شکل میں دو ابتدائی دھچکے لگے۔ ان دو وکٹوں کے خاتمے کے بعد ، سامعین میں مایوسی کا عالم تھا ، لیکن گوتم گمبھیر نے دوسرے سرے پر اپنی برتری برقرار رکھی۔اس کے بعد ، گمبھیر اور ویراٹ کوہلی (35) نے تیسری وکٹ کے لئے 83 رنز کی اہم شراکت قائم کرکے ہندوستان کی امیدوں کو بلند کیا۔ تاہم گمبھیر اور کوہلی کے درمیان یہ شراکت زیادہ دیر تک قائم نہ رہ سکی اور اننگز کے 22 ویں اوور میں کوہلی کو بھی آؤٹ کیا گیا۔ اس کے بعد دھونی نے گمبھیر کے ساتھ مل کر چوتھی وکٹ کے لئے 109 رنز کی شراکت کی اور میچ کو مکمل طور پر ہندوستان کے حق میں کردیا۔ابتدائی دھچکے کے بعد گوتم گمبھیر نے ورلڈ کپ کے فائنل میچ میں اننگز کو جس طرح سنبھالا تھا اسے کبھی فراموش نہیں کیا جاسکتا۔ یہ کہا جاسکتا ہے کہ یہ گمبھیر کی سمجھ بوجھ کی وجہ سے تھا کہ ہندوستانی ٹیم کے لئے ورلڈ کپ کا ٹائٹل جیتنا آسان تھا۔اس میچ میں گمبھیر 97 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے اور ورلڈ کپ میں سنچری پر صرف 3 رنز سے محروم ہوگئے۔ اپنی اننگز میں ، انہوں نے 122 گیندوں کا سامنا کیا جس میں 9 چوکے شامل تھے۔ اگرچہ گمبھیر اپنی سنچری گنوا بیٹھے ، لیکن ان کی میراتھن اننگز کی وجہ سے انہوں نے ورلڈ کپ کے فائنل میں ہندوستانی ٹیم کی فتح کی تصدیق کردی تھی۔
ورلڈ کپ کے فائنل میچ میں کمنٹیٹر کی آواز جس میں دھونی کے چھکوں کا ذکر کیا گیا ہے ، کو شاید ہی کسی ہندوستانی شائقین نے سنا ہو۔ اس میچ میں دھونی نے گمبھیر کے بعد سب سے زیادہ 91 رنز بنائے۔دھونی نے اس میچ میں 79 گیندوں کا سامنا کرتے ہوئے 91 رنز بنائے تھے جس میں 8 چوکے اور دو چھکے شامل تھے۔ اس میں دھونی کا دوسرا چھکا ہندوستانی ٹیم کے لئے وننگ شاٹ تھا اور اس کے ساتھ ہی ہندوستان نے 10 گیندیں باقی رہ کر 6 وکٹوں سے میچ جیت لیا۔

آپ کے تاثرات
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
1
+1
0

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here