طالبان کی حمایت کے معاملے میں نصیر الدین شاہ کا بیان،نفرت کا زہر گھولنا بہت آسان

1
image:ABPLive

نئی دہلی (ایجنسی): بالی ووڈ کے تجربہ کار اداکار نصیر الدین شاہ اور جنہوں نے سلگتے مسائل پر اپنی واضح رائے دی ہے،انہوں نے کہا کہ طالبان کو نہ صرف ہندوستان بلکہ پوری دنیا میں مسلمانوں کے ایک طبقے کی طرف سے حمایت یا خوشی کا اظہار کرنے والے بیان کو غلط انداز میں پیش کیا گیا۔ شاہ نے کہا کہ نفرت کے زہر کو ایسے ماحول میں آسانی سے گھولا جا سکتا ہے۔ شاہ نے کہا میں نے پوری مسلم کمیونٹی کے بارے میں ایسی کوئی بات نہیں کہی لیکن انہیں دکھ ہے کہ بنیاد پرستوں نے اس کے لیے ان پر حملہ بول دیا۔ جب کہ انہوں نے پوری مسلم کمیونٹی کو کٹہرے میں کھڑا کرنے کے لیے کوئی بیان نہیں دیا۔ نصیر الدین شاہ نے کہا کہ انہوں نے صرف کمیونٹی کے کچھ افراد کو ایسا کرنے پر اپنی تشویش کا اظہار کیا تھا۔ ان میں سے ایک مسلم پرسنل لاء بورڈ کا رکن بھی تھے،ان صاحب نے کھل کر طالبان کی حمایت کے بارے میں بیان دیا۔ شاہ نے کہا کہ لڑکیوں کی تعلیم ،لباس اور کھیلوں کے حوالے سے طالبان کے بیان پر یقین نہیں کیا جا سکتا کہ وہ جدیدیت کی راہ پر گامزن ہیں۔

طالبان کی تاریخ ہمیں ان پر اعتماد کرنے کی کوئی بنیاد نہیں دیتی۔ نصیرالدین شاہ نے کہا کہ مسلمانوں کے ایک طبقے کے بارے میں ان کے بیان کے لیے انہیں ہندو بنیاد پرستوں نے سپورٹ کیا اور وہ خوش ہیں کہ ایک مسلمان دوسرے کو کٹہرے میں کھڑا کر رہا ہے،لیکن مجھے ان کی کسی تعریف کی ضرورت نہیں ہے۔ اسے یقین ہے کہ طالبان اپنا موقف تبدیل نہیں کریں گے اور اسی لیے اس نے اس مسئلے پر اپنی رائے کا اظہار کیا۔ ایسے بہت سے لوگ ہو سکتے ہیں جو اس طرح سوچتے ہیں۔ طالبان نے پنجشیر پر قبضہ کر لیا ہے جو کہ پاکستان کے مقبوضہ کشمیر کے قریب ہے اور کون جانتا ہے کہ ان کا اگلا قدم کیا ہو گا … نصیر الدین نے کہا کہ ان لوگوں کو دیکھ کر دکھ ہوا جو ان کے بیان سے ناراض ہیں۔

نصیر الدین شاہ سے سوال کیا گیا کہ لوگ سمجھتے ہیں کہ ہندوستان میں طالبان کی حمایت یا ہمدردی کرنے والے لوگ کم ہیں،لیکن جب ان جیسا دانشور یہ مسئلہ اٹھاتا ہے تو ظاہر ہوتا ہے کہ یہ بڑے پیمانے پر ہو رہا ہے۔ شاہ نے اس پر کہا کہ جنگل کی آگ پھیلنے میں دیر نہیں لگتی۔ ایسی قوتوں کو لوگوں کی ذہنیت پر اثر انداز ہونے میں دیر نہیں لگتی۔ یہی وجہ ہے کہ اس طرح سوچنے والے بہت کم لوگ ہوسکتے ہیں،لیکن انہوں نے اس پر اپنی رائے دی۔ نصیر الدین شاہ نے کہا کہ زیادہ تر لوگ طالبان کے افغانستان پر قبضے کے بارے میں ان کے بیان سے ناراض نہیں ہیں،لیکن ان کی اصلاحات کے بارے میں ان کا غصہ ان کے لیے پریشان کن ہے۔ انہیں کمیونٹی میں ایسی اصلاحات یا جدید کاری کے مخالفین کے موقف کی پرواہ نہیں ہے۔ شاہ نے کہا، “میں نے ہندوستانی اسلام کی بات کی ہے،جس کے ذریعہ وہ معتدل روادار صوفی ازم سے متاثر ایک روایت ہے،جس نے ہمیں عظیم ادب،آرٹ ورک اور دیگر چیزیں دی ہیں،جن کی معین الدین چشتی اور نظام الدین اولیا جیسی شخصیات نمائندگی کرتی ہیں۔ ہندوستانی اسلام ایسا مذہب نہیں ہے جو قانون کی حکمرانی کی بنیاد کو تباہ کرنے کی بات کرتا ہے۔ تاہم جب یہ پوچھا گیا کہ آپ اور جاوید اختر جیسی اصلاح پسند سوچ رکھنے والے بہت کم لوگ ہیں۔ ساتھ ہی یہ دلیل بھی دی جاتی ہے کہ جو لوگ ایسی باتیں کرتے ہیں وہ اسلام کے بنیادی رسم و رواج پر عمل نہیں کرتے اور ان کی باتوں سے زیادہ فرق نہیں پڑتا۔

آپ کے تاثرات
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
1

1 COMMENT

  1. Afsoos k jis aadmi islam ke i se waqiffiyat nhi wo islam or muslim ko aaina dikhate h.
    Ye logon ko apna field or apni raah hamwaar karna h aise bayanat se

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here