ملک سے غداری کے التزام کو جاری رکھنا بدقسمتی: سپریم کورٹ

0

نئی دہلی: (یو این آئی) سپریم کورٹ نے ملک سے غداری کے التزامات کے استعمال کو مسلسل جاری رکھنے پر جمعرات کو سوال کھڑے کیے اور کہا کہ آزادی کے 74 سال بعد بھی اس طرح کے التزام کو قائم رکھنا ’بدبختانہ‘ہے۔

چیف جسٹس این وی رمن،جسٹس اے ایس بوپنا اور جسٹس رشی کیش رائے کی بینچ نے میجر جنرل (ریٹائرڈ) ایس جی ومبٹکیرے کی عرضی پر شنوائی کے دوران اٹارنی جنرل کے کے وینو گوپال سے تعذیرات ہند (آئی پی سی) کی دفعہ 124 (اے) قائم رکھنے کے تُک پر سوال کھڑے کیے۔

جسٹس رمن نے وینوگوپال سے پوچھا کہ آزادی کے 74 سال گذر جانے کے بعد بھی سامراجی دور کے اس قانون کی ضرورت ہے کیا،جس کا استعمال آزادی کی لڑائی کو دبانے کے لیے گاندھی اور بال گنگا دھر تلک کے خلاف کیا گیا تھا۔
وینوگوپال نے عدالت کو مطلع کیا کہ ملک سے غداری کے التزام کی آئینی حیثیت کو چیلنج کرنے والی عرضی پہلے سے ہی دوسری بینچ کے پاس زیر التواء ہے۔ اس کے بعد عدالت نے اس عرضی کو بھی اسی کے ساتھ متعلق کر دیا۔ حالانکہ اس نے مرکز کو نوٹس بھی جاری کیا۔

شنوائی کے دوران جسٹس رمن نے اٹارنی جنرل سے پوچھا کہ آخر اس التزام کی ضرورت کیا ہے جب اس کے تحت جرم ثابت ہونے کی شرح بالکل نہیں ہے۔

چیف جسٹس نے اس دوران انفارمیشن ٹکنالوجی کی مسترد کی گئی دفعہ 66 اے کے تحت مقدمہ جاری رکھنے جیسی لاپرواہی کا بھی ذکر کیا۔

آپ کے تاثرات
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here