فیکٹ چیک :سہارنپور میں سڑک پر نماز پڑھنے سے روکنے پر ہنگامہ نہیں ہوا، میڈیا کی غلط خبریں

0

ایک ویڈیو وائرل ہوا ہے جس میں مسلم کمیونٹی کے افراد مسجد کے سامنے نعرے لگاتے ہوئے نظر آرہے ہیں۔ اسے شیئر کرتے ہوئے دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ اتر پردیش کے سہارنپور ضلع میں سڑک پر نماز پڑھنے سے روکنے پر مسلم کمیونٹی کے لوگوں نے ہنگامہ کھڑا کر دیا۔ زی اتر پردیش اتراکھنڈ نیوز چینل نے اپنے ایک شو کے دوران اس ویڈیو کو چلاتے ہوئے یہی دعویٰ کیا۔ چینل نے دعویٰ کیا کہ سہارنپور میں سڑک پر نماز پڑھنے کے لیے نعرے لگائے گئے۔

نیوز 18 اترپردیش اتراکھنڈ نے اپنی لائیو نشریات میں دعویٰ کیا کہ سہارنپور کی جامع مسجد کے باہر جب نمازیوں کو سڑک پر نماز پڑھنے سے روکا گیا تو انہوں نے ہنگامہ کھڑا کردیا۔

‘اے بی پی گنگا’ نے اپنی ایک نشریات کے دوران دعویٰ کیا کہ سہارنپور کی جامع مسجد کے باہر انتظامیہ کی جانب سے سڑک پر نماز پڑھنے سے روکنے کے بعد نمازیوں نے پولیس کے خلاف نعرے بازی شروع کردی۔

نیوز روم پوسٹ کے آشیش نے اس ویڈیو کو ٹویٹ کرتے ہوئے دعویٰ کیا کہ سڑک پر نماز پڑھنے پر لوگوں کی انتظامیہ سے جھڑپ ہوئی۔ پروپیگنڈہ ویب سائٹ اوپی انڈیا کے سی ای او راہول روشن نے اس ٹویٹ کو ری ٹویٹ کرتے ہوئے لکھا، “دیانت دار لوگ مذہبی جذبات سے چلتے ہیں، سیاسی طاقت سے نہیں۔” بعد میں آشیش نے اس ٹویٹ کو ڈیلیٹ کر دیا۔

نوبھارت ٹائمز کے ایڈیٹر آلوک کمار، زی نیوز کے صحافی شیوم پرتاپ، سدرشن نیوز کے صحافی رجت مشرا، نیوز نیشن کے صحافی امیت چودھری نے بھی ٹویٹ کرتے ہوئے یہی دعویٰ کیا۔ اس طرح کا دعویٰ کرنے والوں کی فہرست میں روزنامہ جاگرن، سدرشن نیوز اتر پردیش، وی کے نیوز بھی شامل ہیں۔ یہ ویڈیو فیس بک اور ٹویٹر پر وائرل ہے۔


فیکٹ چیک
سہارنپور پولیس کے آفیشل ٹویٹر ہینڈل سے وائرل ویڈیو کے سلسلے میں ایس ایس پی آکاش تومر کا بیان جاری کیا گیا ہے۔ آکاش تومر کا کہنا ہے کہ ”جامع مسجد میں الوداع کی نماز بحفاظت مکمل ہو چکی تھی، اس کے بعد جب لوگ مسجد سے نماز ادا کر کے واپس آ رہے تھے تو کچھ میڈیا والوں نے ان سے اشتعال انگیز سوالات پوچھے۔
جس میں کچھ نوجوان لڑکے ہنگامہ کرتے ہوئے چلے گئے۔ لیکن بعد میں حالات پرسکون ہیں، یہ معمول ہے۔ یہاں کوئی جھگڑا نہیں ہوا، ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ، میں اور تمام انتظامی افسران یہاں موجود ہیں اور امن و امان کی صورتحال معمول پر ہے۔ بعض میڈیا چینلز کی جانب سے گمراہ کن اور جھوٹی خبریں پھیلائی جا رہی ہیں، انتظامیہ کی
جانب سے ان کے خلاف نوٹس جاری کیا جائے گا اور وضاحت بھی طلب کی جائے گی۔

کچھ ورڈ سرچ کرنے کے بعد، ہمیں 28 اپریل کو ایک ٹویٹ ملا جس میں وقف جامع مسجد کلاں کے لیٹر ہیڈ پر نماز کے بارے میں اعلان کیا گیا تھا۔ یہ ٹویٹ ای ٹی وی انڈیا اردو سے وابستہ تسلیم نے کیا ہے۔ لیٹر ہیڈ پر لکھا ہے کہ ’’29 اپریل کو الوداع جمعۃ المبارک کی نماز صرف مسجد کے اندر ادا کی جائے گی، گلیوں اور بازاروں میں نہیں، لہٰذا الوداع جمعۃ کی نماز اپنے علاقے میں ادا کریں‘‘۔
ہم نے اس معاملے پر ایک مقامی صحافی سے بات کی۔ انہوں نے ہمیں جامع مسجد سہارنپور کے امام محمد ارشد گوڑہ کے بیان کی ویڈیو بھیجی جس میں وہ کہہ رہے ہیں کہ الوداع جمعۃ المبارک کی نماز بڑی آسانی کے ساتھ ادا کی گئی۔ نماز کے بعد جب لوگ باہر نکل رہے تھے تو کسی کیمرہ پرسن نے کچھ سوال کیا، جس پر لوگ غصے میں آگئے اور نعرے لگانے لگے۔ اس کے بعد انہیں سمجھانے کے بعد بھیج دیا گیا۔ انتظامیہ کا انتظام بہت اچھا تھا، وہاں تمام کام پرامن طریقے سے مکمل ہوئے۔
آلٹ نیوز نے موقع پر موجود ایک صحافی سے بات کی۔ نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر انہوں نے بتایا کہ سوشل میڈیا اور کچھ چینلز پر نشر ہونے والی خبریں درست نہیں ہیں۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ ہر سال کی طرح اس سال بھی جامع مسجد سہارنپور میں نماز پڑھنے کے لیے بھیڑ تھی، لیکن مسجد کے اندر کافی جگہ نہیں ہے۔ چونکہ نماز کا وقت مقرر ہے اس لیے مسجد کمیٹی کے لوگوں نے باہر کھڑے لوگوں سے کہا کہ جن لوگوں کو مسجد کے اندر جگہ نہیں ہے وہ اپنے علاقے کی مساجد میں نماز ادا کریں۔ اور لوگ بغیر کسی احتجاج کے پرامن طور پر واپس چلے گئے۔ تاہم نماز کے بعد کچھ چینل والوں نے مسجد کے اندر نماز پڑھنے کے بعد باہر آنے والے لوگوں سے کچھ اشتعال انگیز سوالات کیے جس پر نعرے بازی شروع ہوگئی۔ تاہم معاملہ 7-8 منٹ میں حل ہو گیا اور پولیس نے صورتحال پر قابو پالیا۔ یہ کوئی بڑا مسئلہ نہیں تھا۔”

مجموعی طور پر سہارنپور کی جامع مسجد کے باہر نماز پڑھنے کے لیے سڑک پر کوئی ہنگامہ نہیں ہوا۔ نماز کے بعد، صحافیوں کے اشتعال انگیز سوالات پوچھنے پر ہنگامہ آرائی کو مین اسٹریم میڈیا، نیوز پورٹلز نے جھوٹے دعوے سے بھڑکایا۔

آپ کے تاثرات
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
1
+1
0

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here