فکیٹ چیک: کیا واقعی شاہ جہاں نے تاج محل تعمیر کرنے والے مزدوروں کے ہاتھ کاٹ دئے تھے؟

0
thelogicalindian.com

وزیر اعظم مودی نے 13 دسمبر کو کاشی وشوناتھ دھام کا افتتاح کیا۔ انہوں نے کاشی وشوناتھ مندر میں صفائی کے کارکنوں پر پھول نچھاور کرکے مندر کو صاف ستھرا رکھنے پر اظہار تشکر کیا۔ اس کے بعد نیوز 18 کے اینکر امیش دیوگن نے پی ایم کا موازنہ 17ویں صدی کے مغل بادشاہ شاہ جہاں سے کیا۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ جب پی ایم مودی نے صفائی کارکنوں پر پھول نچھاور کیے، شاہ جہاں نے تاج محل بنانے والوں کے ہاتھ کاٹ دیے۔ یہ دعویٰ گجرات کے مرکزی وزیر زراعت نریندر سنگھ تومر نے کیا۔ انہوں نے گجراتی میں کہا، “تاج محل کے کارکنوں کے ہاتھ کاٹے گئے، اور دوسری طرف پی ایم مودی ہیں جنہوں نے کاشی وشوناتھ راہداری کی ترقی کے لیے کارکنوں سے اظہار تشکر کرنے کے لیے پھول نچھاور کیے”۔
بی جے پی لیڈر ونے ٹنڈولکر نے ٹویٹر پر یہ دعویٰ کیا۔
آلٹ نیوز نے دیکھا کہ یہ دعویٰ کئی سالوں سے یہ معاملہ چل رہا ہے۔ اس کو شیئر کرنے والے سب سے پرانی مثالوں میں سے ایک 2010 میں وائری فاڈ کی گئ تھی، برطانیہ میں واقع ایک تصدیق شدہ میڈیا اکاؤنٹ ہے۔ چھ سال قبل برطانیہ کے معروف نیوز پورٹل دی گارڈین نے بھی یہی دعویٰ کیا تھا۔
یہ دعویٰ محض ایک فرضی کہانی ہے۔
یہ دعویٰ کہ شاہ جہاں نے تاج محل بنانے والوں کے ہاتھ کاٹ دیے تھے یہ صرف ایک مشہور کہانی ہے جو برسوں سے سنائی جاتی رہی ہے۔ آلٹ نیوز نے مؤرخ ایس عرفان حبیب سے بات کی جنہوں نے کہا، “میں کہہ سکتا ہوں کہ اس کا نہ تو کوئی ثبوت ہے اور نہ ہی کسی معتبر مورخ نے ایسا دعویٰ کیا ہے۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ یہ باتیں 1960 کی ہیں اور میں نے بھی سنی ہیں۔ تاہم، ایک قابل ذکر فرق یہ ہے کہ آج اسے فرقہ وارانہ زاویے سے چلایا جا رہا ہے۔ اور اس وقت یہ شاہ جہاں پر ایک لطیفہ ہوا کرتا تھا۔ گوگل بکس پر رانچی یونیورسٹی کے شعبہ تاریخ کی طرف سے 1971 میں شائع ہونے والا ‘جرنل آف ہسٹاریکل ریسرچ’ ملا۔ اس میں اس قصے کا ذکر ہے۔ تاہم یہاں یہ بھی لکھا ہے کہ اس بات کا کوئی ثبوت نہیں ہے کہ اس میں کتنی صداقت ہے۔ 2017 میں، ٹائمز آف انڈیا نے تاج محل کے بارے میں کئی جھوٹی خبروں کو مسترد کیا تھا، جس میں ہاتھ کاٹنے کی یہ کہانی بھی شامل تھی۔ مضمون میں لکھا ہے کہ یہ کہانی موجودہ ثبوت اور تاج گنج نامی ایک بہت بڑی بستی سے مختلف ہے جو آج بھی موجود ہے۔ اسے شہنشاہ شاہ جہاں نے ہزاروں مستریوں، کاریگروں اور دیگر مزدوروں کے رہنے کے لیے بنایا تھا جو اس کی سلطنت کے دور دراز علاقوں سے آئے تھے۔ ان مزدوروں کی اولادیں اب بھی وہاں رہتی ہیں اور اپنے آباؤ اجداد کے ہنر پر عمل پیرا ہیں۔” صحافی منی مگدھا شرما نے لکھا ہے۔ انڈیا ٹوڈے نے 2016 میں شاہ جہاں کے بارے میں بہت سے حقائق مرتب کیے تھے، جہاں ایک بار پھر یہ دعویٰ غلط تھا کہ اس نے کاریگروں کے ہاتھ کاٹے تھے۔ اسی سال پاکستان میں مقیم نیوز آؤٹ لیٹ ڈان نے نیویارک میں مقیم راجیو جوزف کے ڈرامے ‘گارڈز ایٹ دی تاج’ کے بارے میں ایک مضمون شائع کیا جو اسی کہانی پر مبنی ہے۔ مضمون میں لکھا گیا ہے، ’’شاہ جہاں کی 40,000 ہاتھ کاٹنے کا حکم دینے کی کہانی لوک داستانوں کا حصہ بن چکی ہے۔ حالانکہ اس وقت کا ایک مضمون بھی اس واقعہ کی تصدیق نہیں کرتا۔ یہ ایک حقیقت ہے کہ اسے آج بھی مغلوں کے ساتھ ساتھ اس وقت کے دوسرے بادشاہوں کی طاقت کا ثبوت سمجھا جاتا ہے۔ ہندوستان ٹائمز نے بھی ایک ڈرامے پر رپورٹ شائع کی۔
اس سے بھی اہم بات یہ ہے کہ دسمبر 2021 تک تاج محل کی سرکاری ویب سائٹ پر ایسی کوئی معلومات نہیں دی گئی ہیں۔ ویب سائٹ تاج ٹورز نے اس کہانی کے بارے میں ایک بلاگ شائع کیا۔ بلاگ میں یہ قیاس کیا گیا ہے کہ یہ کہانی کیسے وجود میں آئی ہوگی۔ “دراصل، شاہ جہاں نے اپنے کارکنوں پر ایک اخلاقی پابندی عائد کر دی تھی کہ وہ کسی دوسرے شہنشاہ کے لیے کام نہیں کر سکتے۔ جدید دور میں ہم اسے شہنشاہ اور اس کے کارکنوں کے درمیان معاہدہ کہتے ہیں۔ اس طرح “مزدوروں کے ہاتھ کاٹ دیے گئے” اس لیے وجود میں آئی کیونکہ یہ مزدور کسی دوسرے شہنشاہ سے نیا کام نہیں مانگ سکتے تھے۔ منی موگدھا شرما نے تاج محل کے بارے میں غلط معلومات کے حوالے سے بہت سے مضامین لکھے ہیں۔ آلٹ نیوز سے بات کرتے ہوئے انہوں نے اس دعوے کی تردید کی کہ اس کی کوئی تاریخی بنیاد نہیں ہے۔ نیوز 18 کے اینکر امیش دیوگن اور بی جے پی لیڈر این ایس تومر نے شاہ جہاں اور پی ایم مودی کا موازنہ کرتے ہوئے دہائیوں پرانا جھوٹ بولا۔ جب کہ اس بات کا کوئی ثبوت نہیں ہے کہ شاہ جہاں نے تاج محل بنانے والے مزدوروں کے ہاتھ کاٹے تھے۔

آپ کے تاثرات
+1
0
+1
1
+1
1
+1
3
+1
0
+1
0
+1
0

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here