کچھ لوگ ہر موقع پر لیٹ کیوں ہو جاتے ہیں؟

0

اپنے آس پاس نظر دوڑائیں تو آپ کا کوئی نہ کوئی جاننے والا ایسا ضرور ہو گا جو ہمیشہ لیٹ ہو جاتا ہے۔ وہ لیٹ آنے کا کوئی نہ کوئی بہانہ بھی آپ کو سنائے گا، مگر اگلی مرتبہ پھر لیٹ ہو گا۔
کیا یہ بہانے واقعی جھوٹے بہانے ہوتے ہیں یا ہمیشہ لیٹ ہونے والے افراد اپنی ’عادت کے ہاتھوں مجبور‘ ہوتے ہیں۔سائنسدانوں کا خیال ہے کہ کچھ حد تک لیٹ ہونا انسانی شخصیت کا خاصہ ہوتا ہے اور لیٹ ہونے والے افراد ذہنی طور پر مختلف انداز میں سوچتے ہیں۔
سنہ 2014 کے ایک سروے کے مطابق پانچ میں سے ایک امریکی ہر ہفتے میں کم از کم ایک مرتبہ لیٹ ہو جاتا ہے یعنی ہفتے کے دوران ایک نا ایک موقع ایسا ضرور آتا ہے جب وہ مقررہ وقت پر کہیں پہنچ نہیں پاتا۔
کتاب ’لیٹ!‘ کی مصنف گریس پیسی کہتی ہیں کہ عام افراد دو طرح کے ہوتے ہیں، ایک ٹائم کیپر یعنی وقت کے پابند جو ہمیشہ وقت پر پہنچنے کے لیے بے تاب رہتے ہیں، اور دوسرے ٹائم بینڈر، یعنی جو ہمیشہ وقت سے پیچھے رہتے ہیں۔ ٹائم بینڈر (یعنی ہمیشہ وقت سے پیچھے رہنے والے) افراد کو روٹین پسند نہیں ہوتی اور اُنھیں یکسانیت سے بہت کوفت ہوتی ہے اس لیے وہ بہت جلدی بور ہو جاتے ہیں۔
اُن کے مطابق ٹائم بینڈر افراد کو اگر کسی کام میں دلچسپی ہو تو وہ اس پر بھرپور توجہ مرکوز کر سکتے ہیں اور اگر ان کے پاس وقت کی کمی ہو تو ان کا کام نہایت مؤثر ہو جاتا ہے۔
گریس پیسی کے مطابق اگر آپ دفتر میں ٹائم بینڈرز کا پتہ چلانا چاہیں تو یہ وہ افراد ہوں گے جن کے ڈیسک ہمیشہ بے ترتیب اور مختلف چیزوں سے بھرے ہوئے ہوں گے کیونکہ وہ ایک کام ختم کرنے سے پہلے ہی دوسرا کام شروع کر دیتے ہیں۔
تو کیا آپ میں بھی کچھ ایسی خصوصیات ہیں؟
کتاب ’دی ایکسپیکٹیشن افیکٹ‘ کے مصنف ڈیوڈ رابنسن کہتے ہیں کہ ہر کام نفاست سے اور وقت پر کرنا شخصیت کا ایک اہم حصہ ہوتا ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ اس کا پتا آپ لوگوں سے یہ پوچھ کر چلا سکتے ہیں کہ وہ زندگی میں کتنی ترتیب پسند کرتے ہیں۔ہو سکتا ہے کہ ہمیشہ دیر کر دینے والے لوگوں میں یہ چیز تھوڑی سی کم ہو، مگر کیا بات یہیں ختم ہو جاتی ہے یا اس سے بھی بڑھ کر کچھ ہے؟
گریس پیسی کہتی ہیں کہ ٹائم بینڈر (لیٹ ہونے والے افراد) افراد کو وقت کا احساس مختلف انداز میں ہوتا ہے اور ان کا ہر منٹ ایک جتنا طویل نہیں ہوتا۔ایسے افراد کے لیے وقت تیز بھی ہو سکتا ہے اور سست بھی، اس لیے ہو سکتا ہے کہ وہ کسی چیز میں انتہائی متوجہ ہوں اور اُنھیں وقت کے گزرنے کا احساس بھی نہ ہو، اور یہ بھی ان کے لیے عام ہے کہ جب ڈیڈلائن ان کے سر پر کھڑی ہو تو وہ بہترین انداز میں کام کرنے لگیں۔
سنہ 2016 میں واشنگٹن یونیورسٹی کے محققین نے اس بات کا جائزہ لیا کہ مختلف افراد اپنے ذہن میں وقت کی کتنی اچھی پیمائش کر سکتے ہیں۔ لوگوں کو کچھ ٹاسک دیے گئے اور ساتھ میں گھڑی بھی تاکہ وہ دیکھ سکیں کہ کتنا وقت گزر چکا ہے۔ مگر یہ ٹاسک اتنے توجہ طلب تھے کہ اُنھیں گھڑی دیکھنا یاد ہی نہ رہے۔
تو سائنسدانوں نے پایا کہ کچھ لوگ ذہنی طور پر وقت کے گزرنے کا زیادہ بہتر اندازہ رکھتے تھے۔کئی لوگوں کا جہاز یا ٹرین کبھی نہیں چھوٹتی، پر اگر اُنھیں اپنے بچوں کو وقت پر اسکول چھوڑنا ہو تو یہ کام وہ نہیں کر پاتے۔ ایسا کیوں ہے؟
گریس پیسی کہتی ہیں کہ ٹائم بینڈر افراد ہر چیز کے لیے لیٹ نہیں ہوتے بلکہ صرف وہاں لیٹ ہوتے ہیں جہاں انھیں لگے کہ اس کے نتائج نہیں بھگتنے ہوں گے۔
اس لیے ہم سب سے زیادہ تاخیر اس وقت کرتے ہیں جب ہمیں کسی چیز کی ڈیڈلائن نہ دی گئی ہو اور نہ ہی ہمیں اسے پورا نہ کرنے کے نتائج سے آگاہ کیا گیا ہو، مثلاً سماجی ملاقاتیں اور ایونٹس وغیرہ۔اس لیے اگر یہ کہا جائے کہ ہم تب وقت پر پہنچتے ہیں جب یہ اہم ہو، تو ہمارے آس پاس کے لوگوں کو یہ سوچ کر تکلیف پہنچ سکتی ہے کہ کیا وہ اہم نہیں جنھیں انتظار کرنا پڑ رہا ہے؟
چنانچہ گریس پیسی کہتی ہیں کہ ڈیڈلائن کی اہمیت سمجھنی چاہیے اور ایسے افراد کو چاہیے کہ وہ ڈیڈلائن یا تو خود طے کریں یا پھر دوسروں سے کہیں تاکہ ہم اسے سنجیدگی سے لیں اور یہ ضروری ہے کہ ڈیڈلائن پوری نہ کرنے کے نتائج ہوں کیونکہ دوسری صورت میں ہم نے اس پر عمل نہیں کرنا۔
کیا کیا جا سکتا ہے؟
ہمارے لیٹ ہونے پر سب سے زیادہ الجھن ہمارے دوستوں کو ہوتی ہے اور دوستوں کے ہر گروپ میں کوئی نہ کوئی ایسا دوست ہوتا ہی ہے جو ہمیشہ لیٹ ہو۔
اگر آپ کے گروپ میں آپ کو ایسا کوئی نظر نہیں آتا، تو ہو سکتا ہے کہ وہ آپ خود ہی ہوں۔ویسے اگر کوئی شخص اپنے دوستوں میں لیٹ ہونے کے لیے مشہور (یا بدنام کہیں) ہے تو مسئلہ مزید خراب ہو سکتا ہے۔
ڈیوڈ رابنسن کہتے ہیں کہ لیٹ ہونے والے افراد اس کا قصوروار اپنے جینز کو اتنا زیادہ ٹھہراتے ہیں کہ وہ خود کو ٹھیک کرنے کی ضرورت تک محسوس نہیں کرتے، اس لیے ہمارے اپنے بارے میں خیالات حقیقت کا روپ دھارنے لگتے ہیں اور یہ چیز بہت پریشان کن ہو سکتی ہے حالانکہ ہم تھوڑی سی کوشش سے اپنے اندر بہتری بھی لا سکتے ہیں۔ مگر نفسیات میں تازہ ترین تحقیقات ہمیں یہ بتاتی ہیں کہ عادات و اطوار کو بدلنا ناممکن نہیں ہے بلکہ کچھ محنت کے ذریعے یہ کیا جا سکتا ہے۔
تو کیا ہم خود کو وقت اور ترتیب کا پابند بنا سکتے ہیں؟
ڈیوڈ رابنسن کہتے ہیں کہ کئی تحقیقوں میں یہ دیکھا گیا کہ جب لوگوں سے کہا جاتا ہےکہ وہ کچھ ہفتوں اور کچھ مہینوں کے لیے روزانہ اپنا ایک شیڈول ترتیب دیں اور اسی کے مطابق اپنا کام کریں مثلاً ڈیسک کو ترتیب میں لانے کے لیے وقت مختص کریں، تو یہ دیکھا گیا کہ کچھ ہی عرصے بعد لوگوں کے ذہنوں میں یہ عادت کے طور پر پختہ ہونے لگیں۔ تو اگر آپ بھی ٹائم بینڈر ہیں تو کچھ حد تک ضرور ایسا ہے کہ یہ آپ کی شخصیت کا حصہ ہے اور کچھ لوگ ذہنی طور پر وقت کے گزرنے کا بہتر احساس رکھتے ہیں مگر یہ ضروری نہیں کہ آپ اسے اپنی تقدیر مان لیں، بلکہ کچھ محنت کے ذریعے یہ مسئلہ حل بھی کیا جا سکتا ہے۔