وزیراعظم مودی کا ہماچل پردیش کو نامیاتی کاشتکاری کا مشورہ

0

نئی دہلی:(یو این آئی)، ہماچل پردیش میں نامیاتی کاشتکاری پر زور دیتے ہوئے وزیر اعظم نریندر مودی نے پیر کو کہا کہ اس سے نہ صرف لوگوں کی صحت بہتر ہوگی بلکہ کسانوں کو ان کی پیداوار سے مکمل فوائد حاصل ہوں گے۔ ہماچل پردیش کے تمام 55 لاکھ اہل افراد کے کووڈ ویکسین کی پہلی خوراک کی تکمیل کے بعد مسٹر مودی نے ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے منعقدہ پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اس ریاست کو اگلے 25 برسوں میں کیمیکل سے پاک کیا جانا چاہئے۔
انہوں نے کہا کہ ہماچل پردیش میں صلاحیت ہے اورانہیں یہاں کے نوجوانوں پر مکمل بھروسہ ہے۔ یہاں کے نوجوانوں نے جس طرح ملک کی سرحدوں کی حفاظت کی ہے ، اسی طرح وہ یہاں کی مٹی کی بھی حفاظت کریں گے اور یہاں کے کسان اس میں قائدانہ کردار ادا کریں گے۔
وزیر اعظم نے کہا کہ ہماچل پردیش کو ایک لاکھ کروڑ روپے کے زرعی انفراسٹرکچر فنڈ سے بھرپور فائدہ اٹھاکر اور اس کی مدد سے کولڈ اسٹوریج اور فوڈ پروسیسنگ پلانٹس لگا کر مقامی پیداوار سے بھرپور فائدہ اٹھانا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت جدید رابطے کی توسیع پر زور دے رہی ہے اور سڑک ، ریل ، ہوائی اور انٹرنیٹ خدمات کی توسیع کو ترجیح دی جا رہی ہے۔ اس سے سیاحت کے ساتھ ساتھ کسانوں ، تعلیم اور صحت کے شعبے کو بہت زیادہ فوائد حاصل ہو سکتے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ حکومت نے ڈرون ٹیکنالوجی کے قوانین میں نرمی کی ہے جس سے ہماچل پردیش میں زراعت کے شعبے کے نئے امکانات کو وسعت مل سکتی ہے۔ گھروں میں ادویات کی آسان ترسیل کے ساتھ ساتھ باغات اور زمین کے سروے سے فائدہ ہو رہا ہے۔ ڈرون ٹیکنالوجی کے استعمال سے پہاڑی علاقے کی زندگی آسان ہو سکتی ہے اور جنگل کے علاقے کو بھی محفوظ بنایا جا سکتا ہے۔
مسٹر مودی نے کہا کہ ہماچل پردیش کی خواتین سیلف ہیلپ گروپس کے ذریعے آن لائن پلیٹ فارم کے توسط سے ملک اور بیرون ملک مقامی مصنوعات فروخت کر سکتی ہیں۔ سیب ، سنترہ ، کینو اور سبزیوں کی مانگ بڑھ رہی ہے۔ جنگل کے وسائل اور جڑی بوٹیوں کے حوالے سے بھی اس کوشش کو تیز کرنے کی ضرورت ہے۔کورونا بحران کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ہماچل پردیش ایک سو سال کی سب سے بڑی وبا کے خلاف جنگ میں چیمپئن بن کر ابھرا ہے۔ یہ ملک کی پہلی ریاست ہے جہاں کووڈ کے خلاف پہلی ویکسین اہل لوگوں کو دی گئی ہے اور ایک تہائی آبادی کو دوسری خوراک ملی ہے۔ ایک دن میں سوا سوکروڑ ویکسین دے کر ملک نے ریکارڈ بنایا ہے۔ یہ سبھی کی کوششوں سے ممکن ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ویکسین کی پہلی خوراک سکم اور دادر نگر حویلی میں بھی دی گئی ہے اور کئی ریاستیں اس ہدف کے بہت قریب ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مشکل جغرافیائی حالات کے باوجود ویکسینیشن کا یہ ہدف عوامی شراکت سے حاصل کیا گیا ہے۔ اس میں خواتین کا بہت بڑا رول ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہماچل پردیش نے ویکسین کے بارے میں افواہیں چلنے نہیں دیں۔وزیر اعظم نے کہا کہ ملک میں اب تک ویکسین کی 70 کروڑ خوراکیں دی جا چکی ہیں اور اس حوالے سے کسی قسم کی بے حسی سے بچنے کی ضرورت ہے۔

 

آپ کے تاثرات
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here