پاکستان: سندھ میں پانی کی شدید قلت

0

اسلام آباد: (یو این آئی) پاکستان کے صوبہ سندھ کو پانی کی شدید قلت کا سامنا ہے اور انڈس ریور سسٹم اتھارٹی (آئی آر ایس اے) کی اجازت سے دو متنازعہ لنک کینال کھولے جانے کے باوجود مقامی لوگوں کو زیادہ راحت نہیں ملی ہے۔قامی اخبار ‘ڈین’ نے جمعرات کو یہ اطلاع دی۔پاکستان کی موسمیاتی تبدیلی کی وزیر شیری رحمان نے دریائے سندھ میں پانی کی 60 فیصد کمی کو “انتہائی خطرناک” قرار دیتے ہوئے صوبہ سندھ کے لوگوں کے ساتھ ساتھ ان کی زراعت اور مویشیوں کو بھی خطرے میں ڈال دیا ہے۔چشمہ جہلم (سی جے) لنک کینال، جسے واٹر اینڈ الیکٹرسٹی ڈویلپمنٹ اتھارٹی (واپڈا) کے ذریعے چلایا جا رہا ہے، منگل کو 958 کیوسک پانی کے بہاؤ کے ساتھ کھولا گیا اور بدھ کو 2,000 کیوسک پانی فراہم کیا گیا۔ پنجاب کے محکمہ آبپاشی کے زیر کنٹرول تونسہ-پنجند (ٹی پی) لنک کینال کو بدھ کو 2,404 کیوسک کے بہاؤ کی اجازت دی گئی۔
سندھ کے آبپاشی حکام کا کہنا تھا کہ ارسا کے صدر زاہد جونیجو تربیلا ڈیم میں پانی کے ناکافی بہاؤ اور سندھ میں پانی کے بہاؤ کی طلب پوری نہ ہونے کی وجہ سے کینال کھولنے کے خلاف تھے۔انہوں نے دعویٰ کیا کہ کوٹری بیراج کا بہاؤ بھی زیرو ہے اور سب سے بڑھ کر یہ کہ وزیراعلیٰ سندھ سے سی جے لنک کینال کھولنے کی اجازت نہیں لی گئی۔ انہوں نے کہا کہ سی جے ایک بین صوبائی نہر ہے اور اسے اس طرح نہیں چلایا جا سکتا۔ اسے صرف اس وقت کھولا جا سکتا ہے جب سندھ کی ضرورت پوری ہو اور سسٹم میں پانی کی زیادتی ہو۔دونوں لنک کینال سندھ اور ارسا کے درمیان تنازع کا موضوع رہے ہیں۔ آج کل سندھ کے بیراجوں کو دریائے سندھ میں پانی کی ناکافی بہاؤ کی وجہ سے پانی کی شدید قلت کا سامنا ہے۔ پانی کی کمی کی وجہ سے پہلے اور اب خریف سیزن بری طرح متاثر ہو رہا ہے۔

آپ کے تاثرات
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here