2024 سے پہلے ملک میں مردم شماری کرانا مشکل، چوتھی بار ہوئی تاریخ میں توسیع

0

1941 کے بعد پہلی بار نہیں ہورہی ہے 10 سالہ مردم شماری2011v کے بعد 2021 میں ہونے والی تھی مردم شماری

نئی دہلی (ایجنسیاں)
مردم شماری کے لیے گھروں کی فہرست سازی اور قومی آبادی کے رجسٹر کو اپ ڈیٹ کرنے کا کام یکم اپریل سے 30 ستمبر 2020 کے درمیان ہونا تھا لیکن کورونا وبا کی وجہ سے ملتوی کردیا گیا۔ اس کے بعد سے تاریخ میں مسلسل توسیع کی جارہی ہے۔اب رجسٹرار اور مردم شماری کے دفتر نے تمام ریاستوں سے کہا ہے کہ وہ 30 جون 2023 تک انتظامی حدود کو منجمد کر دیں۔ قانون کے مطابق کسی علاقے کی حدود کا تعین ہونے کے 3 ماہ بعد ہی مردم شماری شروع ہو سکتی ہے۔ اس لیے فی الحال 30 ستمبر 2023 تک مردم شماری شروع نہیں ہوگی۔انتظامی حدودمحدود کرنے کی سب سے پہلے آخری تاریخ 31دسمبر 2019 تھی ، اس میں پہلی توسیع کرکے 31مارچ 2021 کی گئی ، دوسری توسیع کرکے 31دسمبر 2021کی گئی ، تیسری توسیع کرکے 31دسمبر 2022کی گئی اوراب چوتھی توسیع کرکے 30جون 2023کی گئی ہے ۔اب یہ تقریباً واضح ہے کہ 2021 میں ہونے والی مردم شماری 2024 کے لوک سبھا انتخابات سے پہلے نہیں ہوگی۔ اس کے بعد اس دہائی میں کب ہو گی یا بالکل نہیں ہو گی، کچھ نہیں کہا جا سکتا۔ ہمارے ملک میں ہر دہائی میں ایک بار مردم شماری ضابطہ ہے۔ مردم شماری ملک کی آبادی کا سادہ شمار یا سروے نہیں ہے۔ یہ ایک ایسا خاص سروے ہے جو 10 سال میں ایک بار ہوتا ہے، جس میں ملک کے فرد کو شمار کیا جاتا ہے، چاہے وہ سڑک پر رہنے والا بے گھر ہی کیوں نہ ہو۔ ہر خاندان کے ہر فرد کی جنس، عمر، تعلیم، پیشہ درج کیا جاتا ہے۔ خاندان کی ذات، مذہب، زبان، گھر کی قسم، بجلی، پانی، ایندھن کے ذرائع اور چند منتخب اثاثے درج ہیں۔ یہ جانکاری ملک کے تمام اعدادوشمار کا سرکاری ذریعہ ہے۔ مردم شماری کا یہ سلسلہ انگریزوں کے دور سے 1872 سے جاری ہے۔اس کے بعد 1881 سے عشرہ کے پہلے سال میں کرنے کا رواج چلا۔ یہ پتھر کی لکیر صرف 1941 میں ٹوٹی جب دوسری جنگ عظیم چل رہی تھی اور پورا عالمی نظام درہم برہم تھا۔ آزادی کے بعد 1951 سے 2011 تک ملک میں تمام تر آفات کے باوجود مردم شماری کا عمل مستقل بنیادوں پر جاری رہا۔ 1971 میں پاکستان کے ساتھ جنگ کا ماحول تھا، ملک میں لوک سبھا کے انتخابات تھے، پھر بھی اسی سال مردم شماری ہوئی۔ یہ دس سالہ مردم شماری فروری 2021 میں ہونی تھی۔ اس کی تیاری کا پہلا مرحلہ یعنی گھروں اور خاندانوں کی گنتی سال 2020 میں فروری اور اکتوبر کے درمیان کی جانی تھی۔ لیکن اسے کورونا کی وبا کی وجہ سے ملتوی کرنا پڑا۔ اگلے سال اسے دوبارہ کورونا کی دوسری لہر کی وجہ سے ملتوی کر دیا گیا۔ لیکن کورونا ختم ہونے کے بعد بھی حکومت نے مردم شماری کرانے کا کوئی ارادہ نہیں دکھایا۔ گزشتہ سال 2022 میں مردم شماری نہ کرانے کی کوئی وجہ نہیں بتائی گئی۔ حکومت نے ابھی نئے ٹائم ٹیبل کا اعلان کیا ہے کہ اب مردم شماری 2023 میں ہو گی۔ویسے ابھی تک حکومت نے 2023 تک مزید ملتوی کرنے کا باضابطہ اعلان نہیں کیا ہے۔ لیکن گزشتہ ہفتے، وزارت داخلہ کے ایک حکم کے تحت، تمام ریاستی حکومتوں کو اپنی انتظامی حدود کو تبدیل کرنے کی چھوٹ کو جون 2023 تک بڑھا دیا گیا ہے۔ مردم شماری سے قبل انتظامی حدود کی تبدیلی پر پابندی لگانا لازمی ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ اب مردم شماری کا پہلا مرحلہ اس سال جولائی سے پہلے شروع نہیں ہو سکتا اور اس کے 6 ماہ بعد تک مکمل نہیں ہو سکتا۔ اور اس کا مطلب ہے کہ اب دوسرے مرحلے یعنی مردم شماری فروری 2024 سے پہلے ممکن نہیں ہو گی۔ اس وقت ملک میں لوک سبھا انتخابات کی تیاریاں چل رہی ہوں گی، اس لیے مردم شماری ممکن نہیں ہے۔ سب سے اہم بات یہ ہے کہ حکومت نے پوری تیاری کر لی ہے کہ اگلے لوک سبھا انتخابات سے پہلے مردم شماری نہیں ہو سکتی۔ ماہرین نے اب اندازہ لگایا ہے کہ اس سال ہندوستان کی آبادی 141 کروڑ سے تجاوز کر جائے گی اور اس سال چین کی آبادی ہم سے کم ہوگی۔