گذشتہ مالی سال میں زرعی برآمدات میں 17.34 فیصد کا اضافہ ہوا

0
image:https://swarajyamag.com

نئی دہلی : (یو این آئی) حکومت کی جارحانہ پالیسیوں کی وجہ سے گذشتہ مالی سال کے دوران زراعت کی برآمدات میں 17.34 فیصد اضافہ ہوکر 41.25 بلین ڈالر ہوگیا ہے۔
مرکزی وزارت تجارت و صنعت کے سکریٹری ڈاکٹر انوپ ودھاون نے یہاں جمعرات کو پریس کانفرنس میں بتایاکہ مالی سال 2020-21 کے دوران زرعی برآمدات میں عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کیا گیا ہے۔ گذشتہ تین برسوں تک جمود کا شکار رہنے کے بعد مالی سال 2020-21 کے دوران زراعت اور اس سے منسلک مصنوعات کی برآمدات بڑھ کر 41.25 بلین ڈالر ہوگیا۔ اس میں 17.34 فیصد کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے۔
مالی سال 2017-18 میں زرعی برآمدات 38.43 بلین ڈالر ، 2018-19ء میں 38.74 بلین ڈالر اور 2019-20 میں 35.16 بلین ڈالر رہا تھا۔ 2020-21 کے دوران روپے کی مد میں زرعی برآمدات میں 22.62 فیصد اضافہ ہوا ہے۔
مسٹر ودھاون نے بتایا کہ کووڈ وبائی بیماری کے دوران عالمی سطح پر اشیائے خوردونوش کی مانگ میں تیزی آئی ہے اور ہندوستان اس بڑھتی ہوئی طلب کا فائدہ اٹھانے میں کامیاب رہا ہے۔
اعدادوشمار کے مطابق اناج کی برآمدات میں بے پناہ اضافہ دیکھنے میں آیا ہے جبکہ نان باسمتی چاول کی برآمدات میں 136.04 فیصد بڑھ کر 479 کروڑ ڈالر سے زیادہ کا اضافہ ہوگیا ہے۔ گندم کی برآمدات 774.17 فیصد بڑھ کر تقریبا 55 کروڑ ڈالر ہوگیا ہے۔ دیگر اناج (باجرا ، مکئی اور دیگر موٹے اناج) کی برآمدات میں 238.28 فیصد اضافہ ہوا۔
اس کے علاوہ خوردنی تیل ، چینی ، کچی روئی ، تازہ سبزیاں ، سبزیوں کے تیل کی برآمد میں بھی نمایاں اضافہ ہوا ہے۔
ہندوستان کی زرعی مصنوعات کی سب سے بڑی منڈیاں امریکہ ، چین ، بنگلہ دیش ، متحدہ عرب امارات ، ویتنام ، سعودی عرب ، انڈونیشیا ، نیپال ، ایران اور ملائشیا ہیں۔

آپ کے تاثرات
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here