اردو کا بڑا نقصان! نامور نقاد ڈاکٹر گوپی چند نارگ امریکہ میں چل بسے

0

اردو کے مشہور ادیب گوپی چند نارگ اب ہمارے بیچ نہیں رہے۔ گوپی چند نارنگ کی عمر 91 برس تھی اور وہ شمالی کیرولینا، امریکا میں مقیم تھے۔ان کی موت کی اطلاع ان کے بیٹے نے دی۔ گوپی چند نارنگ کو ان کے اردو ادب کی وجہ سے پہچانا جاتا تھا لیکن انہیں اردو کے علاوہ کئی دوسری زبانوں پر عبور حاصل تھا۔ ان کی طبیعت کچھ عرصے سے ٹھیک نہیں تھی۔ نارنگ ملک اور دنیا بھر میں اردو ادب کے لیے جانے جاتے ہیں۔ اس کے لیے انہیں ساہتیہ اکادمی ایوارڈ اور پدم بھوشن سے بھی نوازا جا چکا ہے۔ گوپی چند نارنگ نے اردو کے علاوہ کئی دوسری زبانوں میں بھی اپنی کتابیں لکھی ہیں۔

1958 میں دہلی یونیورسٹی سے اردو ادب میں ڈاکٹریٹ کی ڈگری حاصل کی۔ گوپی چند نارنگ نے دہلی یونیورسٹی کے سینٹ سٹیفن کالج سے اپنی تعلیم مکمل کی۔ جس کے بعد وہ پروفیسر بھی رہے۔انہوں نے کئی غیر ملکی یونیورسٹیز میں ویزیٹنگ اسکالر کے طور پر بھی کام کیا۔ دہلی یونیورسٹی سے وہ جامعہ ملیہ اسلامیہ یونیورسٹی چلے گئے جہاں انہوں نے شعبہ اردو کی سربراہی کی۔پروفیسر نارنگ نے 2004 میں پدم بھوشن، 1995 میں ساہتیہ اکادمی اور غالب ایوارڈز ، 2012 میں صدر پاکستان کا ستارہ امتیاز ایوارڈ سمیت کئی اعزازات حاصل کیے۔ جامعہ ملیہ اور دہلی یونیورسٹی میں پروفیسر ایمریٹس کے طور پر کام کیا۔ تدریس کے علاوہ، پروفیسر نارنگ دہلی اردو اکیڈمی (1996-1999) اور قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان کے نائب صدر – ایچ آر ڈی (1998-2004) ، نائب صدر (1998-2002) تھے۔اپنے ادب کے اس سفر میں نارنگ کو کئی باوقار اعزازات سے نوازا گیا۔ ان کی موت کی خبر ملتے ہی ان کے مداحوں نے سوشل میڈیا پر انہیں یاد کیا۔ نارنگ اپنے مداحوں کے دلوں میں ایک خاص مقام رکھتے تھے۔

گوپی چند نارنگ 11فروری 1931 میں پاکستان اور افغانستان میں واقع بلوچستان کے چھوٹے سے شہر دمکی میں پیدا ہوئے۔ گوپی چند نے تقریباً 65 سےزائد کتابیں لکھی ہیں ۔جن میں ہندی، انگریزی اور اردو زبانوں میں کتابیں شامل ہیں۔ انہیں جدیت، مسایل، اقبال کا تفریح، امیر خسرو کا ہندوی کلام اور اردو افسانہ رعیت جیسے شاندار کاموں کے لیے یاد کیا جاتا ہے۔
دانش رحمٰن