کیرالہ میں’غیر حلال‘ریسٹورنٹ پر تاجروں کے درمیان جھگڑا، فرقہ وارانہ نہیں

0
Image: The News Minute

ترواننت پورم(ایجنسی): 25 اکتوبر کے آس پاس کئی سوشل میڈیا صارفین نے دعویٰ کیا کہ کیرالہ کی ایک خاتون تشارا اجیت کے ہوٹل میں کچھ مسلم بنیاد پرستوں نے حلال کھانے کا اہتمام نہ کرنے پر حملہ کیا۔ بی جے پی کیرالہ کے صدر کے سریندرن نے بھی ٹوئٹر پر یہی دعویٰ کیا۔ انہوں نے لکھا کہ’’ککناڈ میں جو کچھ ہوا وہ طالبان واد سے کم نہیں۔ میں کیرالہ کے لوگوں سے درخواست کرتا ہوں کہ وہ #Halal Invasion کو مسترد کردیں۔‘‘

بی جے پی کے دیگر ارکان جنہوں نے یہ دعویٰ کیا ہے ان میں سیاستدان سندیپ واچسپتی، انوپ جے اور سی ٹی روی شامل ہیں۔ یہ دعویٰ راہل ایشور نے بھی کیا جو ایک’ہندو کارکن‘ہیں۔ بعد میں انہوں نے ٹویٹ ڈیلیٹ کر دیا اور معافی مانگ لی۔

اس معاملے کی جب تفتیش کی جاتی ہےتو حقائق کچھ اورسامنے آتے ہیں۔
سب سے پہلے حلال کھانے پر توجہ دیں ۔حلال کھانا وہ ہے جو قرآن میں دیے گئے اسلامی قانون کے مطابق تیار کیا جاتا ہے۔ یہ قانون عام طور پر جانوروں کے کاٹنے کا طریقہ بیان کرتا ہے۔ حلال فوڈ اتھارٹی کی ویب سائٹ پر مزید معلومات حاصل کی جا سکتی ہیں، ایک غیر منافع بخش تنظیم جو کہ حلال اصولوں کی پابندی کی نگرانی کرتی ہے۔ 2014 میں بی بی سی نے اس پر ایک رپورٹ شائع کی۔ جنوری میں کیرل کومودی نے اطلاع دی کہ تشارا اجیت کلائیل نے کیرل میں پہلا’غیر حلال‘ریستوراں شروع کیا ہے۔ جسے نندو کا کچن کہا جاتا ہے۔ تشارا اجیت نے کیرالہ کومودی کو بتایا کہ یہ بورڈ اس لیے لگایا گیا تھا کہ کچھ لوگوں نے کھانے سے گریز کیا کیونکہ یہ کھانا حلال نہیں ہے، جس کی وجہ سے مسائل پیدا ہوئے۔

دی نیوز منٹ‘کی رپورٹ کے مطابق، پولیس نے بتایا کہ 24 اکتوبر کی شام کو دو دکانوں کے مالکان کے درمیان ہاتھا پائی ہوئی۔ ایک طرف تشارا،اس کا شوہر اجیت اور کچھ اور لوگ شامل تھے۔ دوسری طرف دکان کے مالک نکول اور بنوز جارج شامل تھے۔

تشارا (ایف آئی آر 1290/21) اور بنوز جارج (ایف آئی آر 1289/21) دونوں نے 24 اکتوبر کو پولیس میں شکایت درج کرائی۔ کیرالہ میں مقیم صحافی زین آصف نے Alt News کے لیے FIR کا انگریزی میں ترجمہ کیا۔ بنوز جارج کے مطابق نکول اپنے کیفے (ڈائن ریسٹرو کیفے) کے باہر چاٹ کا اسٹال چلاتے تھے۔ انہیں بتایا گیا کہ تشارا اور اس کے شوہر نے مبینہ طور پر اسٹال ہٹا دیا۔ تشارا کے پوچھنے پر ہاتھا پائی ہو گئی۔ اسے تشارا اور ایک اور شخص نے مبینہ طور پر تھپڑ مارا تھا۔ اس شخص نے جان بوجھ کر نکول کا ہاتھ بھی کاٹ دیا اور اس کی ٹانگ پر چاقو سے حملہ کیا۔ یہ ایف آئی آر سن رائز اسپتال میں درج کی گئی تھی جہاں دونوں کو اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا۔ آئی پی سی کی دفعہ 323 [رضاکارانہ طور پر کسی بھی شخص کو تکلیف پہنچانے کی سزا]، 324 [رضاکارانہ طور پر خطرناک ہتھیاروں یا ذرائع سے نقصان پہنچانا]، 326 [جان بوجھ کر خطرناک ہتھیاروں یا ذرائع سے کسی بھی شخص کو شدید نقصان پہنچانا] اور 34 [تمام افراد کے لیے سزا] کی مشترکہ نیت سے مجرمانہ فعل کا ارتکاب کرنا۔

تاہم تشارا کے مطابق نکول اور ایک نامعلوم شخص (جارج) مبینہ طور پر ان کے ریستوران (نندو کے کچن) میں آئے اور جھگڑا شروع کر دیا۔ تشارا نے دعویٰ کیا کہ انہوں نے اس کے سر پر مارا اور جب اس نے پولیس کو رپورٹ کرنے کی دھمکی دی تو نکول نے مبینہ طور پر اس کی ساڑھی اور بلاؤز کو پکڑ لیا اور اس کے کپڑے جزوی طور پر اتار لیے۔ کچھ دیر بعد نامعلوم شخص نے مبینہ طور پر اس کے پیٹ میں چھرا گھونپا اور پھر اس کے اسٹاف ممبر نے کچن سے چاقو لے کر نکول پر حملہ کردیا۔ بیان کے مطابق اس نے نکول اور جارج کو ہسپتال لے جانے کی پیشکش کی۔ آئی پی سی کی دفعہ 354 [عورت پر حملہ یا مجرمانہ طاقت اس کی شائستگی کو مجروح کرنے کے ارادے سے]، 323 [کسی بھی شخص کو رضاکارانہ طور پر تکلیف پہنچانے کی سزا]؛ 294(B) [کسی بھی فحش کام کرنے کی سزا، کوئی فحش گانا، یا کسی بھی عوامی جگہ پر الفاظ کا بولنا]، اور 34 [تمام افراد کے مجرمانہ فعل کرنے کی مشترکہ نیت کی سزا]۔ قابل ذکر بات یہ ہے کہ تشارا نے بیان میں اس بات کا تذکرہ نہیں کیا کہ ان پر’جہادیوں‘نے حملہ کیا تھا، لیکن سوشل میڈیا پر دعویٰ کیا تھا (مضمون میں بعد میں بحث کی گئی)۔

کوچی شہر کے پولس کمشنر ناگاراجو چکلم نے آلٹ نیوز کو بتایا کہ 24 اکتوبر کو ہونے والا واقعہ ’نو حلال‘بورڈ سے متعلق نہیں ہے اور تشدد فرقہ وارانہ نہیں تھا۔ یہ لوگوں کے درمیان جھگڑا تھا۔ اس وقت تشارا اور اجیت پولیس سے چھپے ہوئے ہیں۔ اسے جاری تفتیش کی بنیاد پر جلد ہی گرفتار کر لیا جائے گا۔‘
28 اکتوبر کو، انفوپارک پولیس نے اپنی تحقیقات پر مبنی ایک ملیالم رپورٹ شیئر کی ۔ پولیس نے اپنی رپورٹ میں لکھا ہے کہ یہ تشارا، اس کے شوہر اور اس کے ساتھیوں کا منصوبہ بند حملہ تھا۔ تشارا کا شوہر اجیت چرنالور پولیس اسٹیشن میں امتیاز قتل کیس سمیت کئی معاملوں میں ملزم ہے۔ Alt News کو 2017 کی TOI رپورٹ ملی، جس میں ایک رئیل اسٹیٹ بزنس مین امتیاز خان کے قتل کے سات ملزمان میں سے ایک کے طور پر اجیت کا نام بھی لیا گیا ہے۔

کوچی سٹی پولیس کمشنر ناگاراجو چکلم نے ایک سی سی ٹی وی فوٹیج شیئر کی ہے جس میں تشارا اور اس کے ساتھیوں کو دکھایا گیا ہے۔ 58 سیکنڈ میں ان میں سے ایک کو سی سی ٹی وی توڑتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔ اس معاملے کو فرقہ وارانہ زاویہ کیسے دیا گیا؟

25 اکتوبر کو، تشارا نے 9 فیس بک لائیو (8 منٹ 41 سیکنڈ، 8 منٹ 53 سیکنڈ، 9 منٹ 13 سیکنڈ، 9 منٹ 54 سیکنڈ، 9 منٹ 58 سیکنڈ، 10 منٹ 38 سیکنڈ، 10 منٹ 46 سیکنڈ، 14 منٹ 51 سیکنڈ، 14 منٹ 52 سیکنڈ)۔ ان ویڈیوز میں طرح طرح کے دعوے کیے گئے۔ کوچی شہر کے پولس کمشنر ناگاراجو چکلم نے ٹی این ایم کو بتایا کہ اس معاملے پر سوشل میڈیا پر تشارا اور دیگر کی طرف سے بیان کردہ فرقہ وارانہ زاویہ جیسا کچھ نہیں ہے۔ بنیادی طور پر مختلف فریقوں کے درمیان معاہدوں، ذیلی معاہدوں وغیرہ پر جھگڑے ہوتے رہے ہیں۔ تباہی، فرنیچر کی مبینہ چوری وغیرہ، تجارتی جگہ کے دعوے کے مترادف ہے۔ پولیس اسٹیشن میں کی گئی تمام شکایات اور سوشل میڈیا پر پوسٹ کا کوئی دوسرا ورژن اس بات کا اشارہ ہے کہ یہ صرف کسی خاص پارٹی یا ان کے خلاف پولیس کارروائی پر دباؤ ڈالنے کے لیے ہیں۔

آلٹ نیوز نے ملیالم زبان میں مہارت رکھنے والے ایک شخص سے بات کی جس نے بتایا کہ تقریباً 1 منٹ کے پہلے فیس بک لائیو میں، تشارا نے دعویٰ کیا کہ’جہادیوں‘نے’فرقہ پرست یا کومی ہندوؤں‘کے ساتھ مل کر اس پر حملہ کرنے کی کوشش کی۔
مجموعی طور پرکوچین کے انفوپارک علاقے میں ریستوران کے مالکان تشارا اجیت، نکول، بنوز جارج اور دیگر کے درمیان ہونے والی جھڑپ کو سوشل میڈیا پر تشارا کے گمراہ کن دعوؤں کے ساتھ فرقہ وارانہ فسادات نے ہوا دی ہے۔ لیکن یہ فرقہ وارانہ کوئی معاملہ نہیں ہے ۔ یہ تو آپسی لڑائی کا شاخسانہ ہے ۔

آپ کے تاثرات
+1
0
+1
0
+1
0
+1
1
+1
0
+1
1
+1
0

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here