رجسٹریشن کا ترمیمی بل منظور،اب بچپن کی بھی شادی کا ہوسکے گا رجسٹریشن

0
image:lokshakti.com

نئی دہلی (ایجنسی):لازمی شادی رجسٹریشن بل 2009 کے قانون میں ترمیم کا بل جمعہ کو راجستھان اسمبلی میں بی جے پی کی شدید مخالفت کے درمیان منظور کیا گیا۔ شادی کی لازمی رجسٹریشن (ترمیمی) بل 2021 کے ذریعے حکومت کو اب مزید اختیارات مل گئے ہیں۔ پہلے صرف ڈسٹرکٹ میرج رجسٹریشن آفیسر (ڈی ایم آراو) کو شادیوں کو رجسٹر کرنے کا اختیار دیا گیا تھا لیکن اب اگر حکومت چاہے تو اضافی ڈی ایم آر او بلاک ایم آراو بھی مقرر کر سکتی ہے۔


جو شادیوں کو رجسٹر کرنے کا اختیار رکھتی ہے۔ اپوزیشن کی اصل مخالفت سیکشن 8 میں ترمیم کے حوالے سے تھی۔ 2009 میں ایکٹ کے سیکشن 8 کے مطابق اگر لڑکے اور لڑکی کی عمر 21 سال سے کم ہے تو ان کے والدین یا سرپرست 30 دن کے اندر شادی کے اندراج کے لیے رجسٹرار کو ایک میمورنڈم جمع کرائیں گے۔ نئے قانون کے مطابق اگر دولہا 21 سال کا ہے اور دلہن کی عمر 18 سال سے کم ہے تو والدین یا سرپرست کو 30 دن کے اندر شادی کا اندراج کروانا چاہیے۔ 2021 کے قانون کے مطابق اگر لڑکے نے 21 سال کی عمر مکمل نہیں کی ہے اور لڑکی کی عمر بھی 18 سال سے کم ہے تو والدین کو 30 دن کے اندر شادی کا اندراج کروانا ہوگا۔ اب ایک شادی شدہ لڑکی 18 سال کی ہونے پر خود ہی شادی کی رجسٹریشن کے لیے درخواست دے سکے گی۔

بی جے پی نے بچپن کی شادی کو فروغ دینے کا الزام لگایا
بھارتیہ جنتا پارٹی کا کہنا ہے کہ جب بچہ شادی خود ہی غیر قانونی ہے تو پھر حکومت اس کی رجسٹریشن کی بات کیوں کر رہی ہے۔ ایسی صورتحال میں ہم بچپن کی شادی کو فروغ دینے کی سمت میں آگے بڑھیں گے۔ آزاد ایم ایل اے سنیم لوڈھا نے کہا کہ اس طرح یہ بل بچپن کی شادی کو درست ثابت کر رہا ہے جو کہ دوسرے لوگوں کے خلاف بھی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اب ایسے لوگ زیادہ ہیں جو اپنے بچوں کو تعلیم دیتے ہیں اور بچپن کی شادی کو پسند نہیں کرتے لیکن اگر آپ بچپن کی شادی کو جائز قرار دیتے ہیں تو اس سے ملک میں غلط پیغام جائے گا۔ راجستھان قانون ساز اسمبلی کی پورے ملک کے سامنے توہین کی جائے گی۔ لوڈھا جو وزیر اعلیٰ اشوک گہلوت کے قریبی سمجھے جاتے ہیں نے کہا کہ گہلوت نے اپنے کاموں کے ذریعے حکومت کی شبیہ کو ترقی یافتہ بنایا ہے اس لیے بل کو منظور نہیں کیا جانا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کو ریاست کا “ترقی پسند” امیج بھی برقرار رکھنا چاہیے۔ کٹاریہ نے کہا کہ ہم نے ایک بار غلطی کی تھی اور اب ہم اسے دہرارہے ہیں۔ ‘‘2009 کے ایکٹ کے لیے معافی مانگتے ہوئے انہوں نے مزید کہا کہ وہ اس وقت اسمبلی کے رکن بھی تھے۔ اگر نابالغ بچوں کی شادی ہو جاتی ہے اور ریاست انہیں قانون کے مطابق سرٹیفکیٹ دیتی ہے تو یہ کیسے درست ہے؟

حکومت کی دلیل
اسی پارلیمانی امور کے وزیر شانتی دھاریوال نے کہا کہ بل کہیں نہیں کہتا کہ کم عمری میں شادی قانونی ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ بل شادی کو قانونی نہیں بناتا۔ اس کے علاوہ ضلع کلکٹر ان کے خلاف کارروائی کر سکتا ہے۔ دھاریوال نے کہا کہ یہ بل مرکزی قانون کے خلاف بھی نہیں جاتا۔ انہوں نے سپریم کورٹ کے فیصلے کو یاد کیا کہ 2006 میں سپریم کورٹ نے کہا تھا کہ شادی کا اندراج لازمی ہے ۔ چاہے نابالغ نابالغ ہو یا نہیں۔

آپ کے تاثرات
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
0
+1
1

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here