ہنر ہاٹ نے پانچ لاکھ ہنرمندوں کو دلائے روزگار کے مواقع:مختار عباس نقوی

0
21

لکھنؤ:  مرکزی وزیر برائے اقلیتی امور مختار عباس نقوی نے جمعرات کو دعویٰ کیا کہ ملک کے مختلف مقامات پر اب تک منعقد ہوئے ہنر ہاٹ کے ذریعے نہ صرف ملک کے ہنرمند اور دستکاروں کو ایک مضبوط پلیٹ فارم ملا ہے بلکہ اس سے وابستہ پانچ لاکھ سے زیادہ افراد کو روزگار کے مواقع ملے ہیں۔ 
نقوی نے یہاں صحافیوں سے کہا کہ گذشتہ تقریباً پانچ برسوں میں ہنرہاٹ کے ذریعے پانچ لاکھ سے زیادہ دستکاروں، کاریگروں اور ان سے وابستہ افراد کو روزگار اور روزگار کے مواقع مہیا ہوئے ہیں۔ ہنر ہاٹ سے ملک کے کونے کونے کی شاندار روایتی دستکاری کی وراثت کو مزید استحکام اور شناخت ملی ہے۔ 
انہوں نے کہا کہ آج سے شروع 24 واں ہنرہاٹ ملک کے دستکاروں اور کاریگروں کو نہ صرف مواقع اور بازار مہیا کروائے گا بلکہ ایک ضلع ایک پیداوار (او ڈی او پی) منصوبے کو نئی سمت دے گا۔ ووکل فار لوکل تھیم کے ساتھ اودھ  میں چار فروری تک چلنے والے ہنرہاٹ کا رسمی طور پر افتتاح کل 23 فروری کو اترپردیش کے وزیراعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ کریں گے۔ 
ہنرہاٹ میں آندھراپردیش، آسام، بہار، چنڈی گڑھ، دہلی، گوا، گجرات، ہریانہ، ہماچل پردیش، جموں و کشمیر، جھارکھنڈ، کرناٹک، کیرالا، لداخ، مدھیہ پردیش، منی پور میگھالیہ، ناگالینڈ، اڈیشہ، پدوچیری، پنجاب، راجستھان، سکم، تملناڈو، تلنگانہ، اترپردیش، اتراکھنڈ، مغربی بنگال سمیت 31 ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں سے تقریباً 500 ہنر کے استاد شامل ہو رہے ہیں۔
نقوی نے کہا کہ لکھنؤ کے ہنر ہاٹ میں ملک کے دستکار، اجرکھ، ایپلِک، آرٹ میٹل ویئر، ٹائیگرپرنٹ، باٹِک، بنارسی ساڑی، بندھیج، بستر کی جڑی-بوٹیاں، بلیک پاٹری، بلاک پرنٹ، بینت-بانس کے سامان، چکن کاری، کاپر بیل، ڈرائی فلاورس، کھادی کے پروڈکٹ، کوٹہ سِلک، لاکھ کی چوڑیاں، لیدرھ، پشمینہ شال، رام پوری وائلِن، لکڑی-آئرن کے کھلونے، کانتھا ایمبروئڈری، براس-پیتل کے پروڈکٹ، کرسٹل گلاس آئیٹم، چندن کے نوادرات وغیرہ کی دیسی دستکاری سے تیار شاندار پروڈکٹ مظاہرہ اور فروخت کے لیے لے کر آئے ہیں۔ 
انہوں نے کہا کہ ہنرہاٹ میں آنے والے لوگ ملک کی روایتی لذیذ کھانوں کا لطف بھی اٹھائیں گے، وہیں ملک کے معروف آرٹسٹ کی جانب سے ہر دن پیش کیے جانے والے مختلف ثقافتی پروگرام توجہ کا مرکز ہوں گے۔