ماڈل ریشمہ خان پر تیزاب حملہ کیا لو جہاد کا معاملہ ہے؟

0
11

چنئی کی ایک خاتون سے متعلق ایک حالیہ واقعے کے بعد ، جس کو اس کے بنگلہ دیشی عاشق نے لندن سے اغوا کیا تھا اور اسے مذہب تبدیل کروایا گیا تھا ، کے بعد ہندوستانی سوشل میڈیا پرایک بار پھر لو جہاد ٹرینڈ میں آگیا ہے۔

سوشل میڈیا پر  ایک تصویر وائرل ہو رہی ہے جس میں دو تصاویر کا ایک کولاج ہے ایک میں- ایک ضاتون کو دیکھا جا سکتا ہے اور دوسری تصویر میں اس کا چہرہ جلا ہوا دیکھا جا سکتا ہے۔ اس کے ساتھ دعوی کیا جا رہا ہے کہ وہ ایک ہندو لڑکی ہے جس پر اس کے مسلمان پریمی نے حملہ کیا۔
ایک انسٹاگرام صارف نے ہندی میں ایک دعوے کے ساتھ تصویر کولیج پوسٹ کی ہے جس  میں لکھا گیا ہے، ہیش ٹیگ لوج جیہاد، اس نے کہا کہ اس کا ساتھی دوسروں کی طرح نہیں تھا۔ ہندو بہنو ، اب بھی وقت ہے ، ان لوگوں سے دور رہیں۔ جئے شری رام ”۔
اس پوسٹ میں دعوی گمراہ کن ہے۔ وائرل تصویر میں نظر آنے والی لڑکی ایک مسلمان ہے ، جس پر 2017 میں لندن میں ایک سفید فام شخص نے حملہ کیا تھا۔
بہت سارے ٹویٹر صارفین لو جہاد کے دعووں کے ساتھ کولیج شیئر کرچکے ہیں۔ 

فیکٹ چیک:

ریورس امیج سرچ کا استعمال کرتے ہوئے ، ہمیں وائرل کولیج کو "ٹائمز آف انڈیا" کی ایک فوٹو گیلری میں ملا۔
فوٹو گیلری ، ریشمہ خان کے بارے میں تھی ، ایک خواہش مند ماڈل ، جس پر اس کے کزن جمیل مختار کے ساتھ  لندن کے بیکٹن میں ، 21 جون 2017، کو جان ٹاملن نامی ایک سفید فام شخص نے حملہ کیا تھا۔ اس دن ریشمہ کی 21 ویں سالگرہ تھی۔ جان نے ان دونوں پر تیزاب پھینک دیا جب وہ ٹریفک میں اپنی کار میں انتظار کر رہے تھے۔
بی بی سی کی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ، "جان نے اعتراف کیا کہ اس نے جان بوجھ کر اس پر تیزاب پھینکا اور اس کو جسمانی نقصان پہنچا، اس کے بعد ، 2018 میں ، جان کو 16 سال قید کی سزا سنائی گئی۔
اس واقعے کو بین الاقوامی میڈیا نے بڑے پیمانے پر کور کیا تھا۔ نیوز ویب سائٹ "انڈیپنڈنٹ" کے مطابق ، ریشما کی کزن جمیل نے بتایا کہ ان پر حملہ لندن میں بڑھتے ہوئے اسلامو فوبیا کا نتیجہ تھا۔
کچھ مہینوں کے بعد ، ریشما نے بازیافت کی اپنی کچھ تصاویر سوشل میڈیا پر شیئر کیں۔ اس کی حالیہ تصاویر ان کے ٹویٹر اور انسٹاگرام اکاؤنٹس پر دیکھی جاسکتی ہیں۔

نتیجہ:
لہذا ، یہ نتیجہ اخذ کیا جاسکتا ہے کہ  اس تصویر کے ساتھ لو جہاد کا دعوی غلط ہے۔ تیزاب حملے کی شکار ایک مسلمان خاتون تھی ، جسس پر لندن میں ایک سفید فام شخص نے حملہ کیا تھا۔

بشکریہ انڈیا ٹوڈے